آسٹریلیا

آسٹریلیا جانے والوں کو کن مسائل کا سامنا کرنا پڑسکتا ہے؟ جانیے

Read Time:2 Minute, 15 Second


آسٹریلیا میں عارضی ویزوں پر مقیم تارکین وطن کی مستقل ویزوں کی درخواستوں کو طویل انتطار کا سامنا ہے، عارضی ویزہ رکھنے والے مستقل رہائش کے ویزے کے حصول کے لیے طویل انتظار کرنے پر ملک بھر میں احتجاج کر رہے ہیں۔

مائیگرنٹ ورکرز سینٹر کی ایک رپورٹ کے مطابق پچھلے چار سالوں میں ویزوں کی کچھ کٹیگریز میں پروسیسنگ کا دورانیہ دوگنا ہوگیا ہے۔

عارضی ویزوں پر بیرون ملک آنے والے تارکین وطن مستقل رہائشی ویزوں میں طویل تاخیر کے خلاف اپنے مطالبات کی منظوری کیلئے سڑکوں پر ہیں۔

چینی نژاد شخص کا کہنا تھا کہ اس نے دو سال قبل مستقل رہائش کے لیے اپنی دستاویزات جمع کرائی تھیں مگر اب تک ان کی ویزے کی درخواست کا فیصلہ التواء کا شکار ہے۔

مائیگرنٹ ورکرز سینٹر کی رپورٹ نئے تارکین وطن کی آسٹریلیا کو حقیقی معنوں میں اپنا گھر بنانے کی کوششوں کی ایک سنگین تصویر پیش کرتا ہے۔

اس رپورٹ میں پتا چلا ہے کہ887 ذیلی طبقے کے ہنرمند علاقائی ویزوں کے لیے پراسیسنگ کے وقت کے ساتھ برجنگ ویزا رکھنے والوں کی تعداد میں چھ گنا اضافہ ہوا ہے اور ویزے لگنے کی مدت دو سال تک پہنچ گئی ہے۔

آجر کے زیر کفالت ون ایٹھ سکس ویزے کے درخواست دندگان کی انتظار مدت ایک سال تک بڑھ چکی ہے جبکہ مرکز کے چیف ایگزیکٹو میٹ کنکل کا کہنا ہے کہ 189 ہنر مند آزاد ویزوں پر رہنے والوں کو مستقل رہائشی بننے کے لیے 39 ماہ کے انتظار کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

کام کرنے والے ورکرز کی کمی سے نمٹنے کے لیے بیرون ملک سے مزید کارکنوں کی ضرورت ہے،جس کے باعث ملک میں پہلے سے مقیم عارضی ویزے رکھنے والوں میں بے چینی اور بڑھ رہی ہے۔

ریلی کے منتظمین نے محکمہ داخلہ سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ان لوگوں کے لیے ویزا کی پروسیسنگ کو ترجیح دیں جو پہلے سے آسٹریلیا میں مقیم ہیں، ان میں کچھ 5 سالوں سے اپنے عارضی ویزے کو مستقل ویزے کی تبدیلی کے منتظر ہیں۔ مائیگرنٹ ورکرز سینٹر کی ایک کمیونٹی ورکر ہانیہ ڈیوس خود ان لوگوں میں سے ایک ہیں۔

Comments





Source link

Happy
Happy
0 %
Sad
Sad
0 %
Excited
Excited
0 %
Sleepy
Sleepy
0 %
Angry
Angry
0 %
Surprise
Surprise
0 %

Average Rating

5 Star
0%
4 Star
0%
3 Star
0%
2 Star
0%
1 Star
0%

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *